فیس بک کا ’فیس ریکگنیشن‘ فیچر ختم کرنے کا اعلان

یہ اعلان پرائیویسی سے متعلق سنگین خدشات کے تناظر میں کیا گیا

سر ینگر: سماجی رابطے کی معروف ویب سائٹ فیس بک نے چہرے کی شناخت (فیس ریکگنیشن) کے نظام کو ختم کرنے اور اربوں فیس پرنٹس ڈیلیٹ کرنے کا اعلان کردیا۔فیس بک کی پیرنٹ کمپنی میٹا کی جانب سے یہ اعلان اسکینڈلز کا شکار سوشل میڈیا نیٹ ورک سے متعلق پرائیویسی کے سنگین خدشات کے تناظر میں کیا گیا۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق یہ اعلان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب ٹیک جائنٹ کو اب تک کے بدترین بحران کا سامنا ہے جبکہ رپورٹرز، قانون سازوں اور امریکی ریگولیٹرز کو کمپنی کے اندرونی دستاویزات بھی لیک کردی گئی ہیں۔فیس بک کی پیرنٹ کمپنی میٹا نے اپنے بیان میں کہا کہ ’معاشرے میں چہرے کی شناخت کی ٹیکنالوجی کے مقام کے بارے میں بہت سے خدشات موجود ہیں، اور ریگولیٹرز ابھی تک اس کے استعمال کو کنٹرول کرنے کے لیے قوانین وضع کرنے کے لیے کوشاں ہیں‘۔

کمپنی نے مزید کہا کہ ’ہم سمجھتے ہیں کہ اس غیر یقینی صورتحال کے دوران چہرے کی شناخت کے استعمال کو محدود رکھنا مناسب ہے‘۔اس فیصلے کے نتیجے میں فیس بک کا ایک ایسا فیچر ختم ہوجائے گا جو خود بخود ان لوگوں کی شناخت کرتا ہے جو صارفین کی ڈیجیٹل تصاویر میں نظر آتے ہیں، اور یہ فیچر چہروں کی ایک وسیع و عریض، عالمی لائبریری بنانے کی بنیاد تھا۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ اس نظام کو بند کرنے کے نتیجےمیں ’ایک ارب سے زائد افراد کے چہرے کی شناخت کے انفرادی ٹیمپلیٹس کو حذف کر دیا جائے گا‘۔اس تبدیلی کے بعد اب فیس بک سائٹ یا ایپ اس کمپنی کا مرکز نہیں رہی بلکہ انسٹاگرام اور واٹس ایپ کی طرح ایک ذیلی شاخ بن گئی ہے مگر سوشل نیٹ ورک کا نام بدستور فیس بک ہی رہے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں