پے در پے شہری ہلاکتوں کے بعد سرینگر میں ہایی الرٹ

سرینگر / خبر اردو / پے در پے شہری ہلاکتوں کے بعد شہر سرینگر میں سیکورٹی کا بندوبست سخت کیا گیا ہے۔ دن بھر لالچوک اور اُس کے ملحقہ علاقوں میں راہگیروں اور مسافروں کی تلاشی لی گئی جس دوران اُن کے شناختی کارڈ باریک بینی سے چیک کئے گئے۔

معلوم ہوا ہے کہ شہری ہلاکتوں کے پیش نظر شہر سرینگر میں سیکورٹی کو مستعد رہنے کے احکامات صادر کئے گئے ہیں جبکہ معاملے کی باریک بینی سے تحقیقات ہو رہی ہیں۔ذرایع کے مطابق شہری ہلاکتوں میں غیر معمولی اضافہ کے بیچ پورے شہر کو فوجی چھاونی میں تبدیل کیا گیا ہے۔

نمائندے نے بتایا کہ شہر سرینگر کے لالچوک، ریگل چوگ، سرائے بالا میں دن بھر تلاشی کارروائیوں کا سلسلہ جاری رہا جس دوران راہگیروں اور مسافروں کی باریک بینی سے تلاشی لینے کے ساتھ ساتھ اُن کے شناختی کارڈ بھی چیک کئے جا رہے تھے۔

نمائندے نے بتایا کہ شہر کے حساس علاقوں میں موبائیل بینکر بنائے گئے ہیں جہاں پر مسافر بردار گاڑیوں کو روک کر اُن کی تلاشی لی جارہی ہیں۔ نمائندے کے مطابق شہر کے حساس علاقوں میں اضافی اہلکاروں کی تعیناتی کے ساتھ ساتھ سی سی ٹی وی کیمروں کے ذریعے مشکوک افراد پر نظر گزر رکھی جارہی ہے۔

معلوم ہوا ہے کہ پولیس، سراغ رساں ایجنسیوں کے سینئر عہدیداران کی بھی شہری ہلاکتوں کے حوالے سے ایک میٹنگ منعقد ہوئی جس دوران ملوثین کو بے نقاب کرنے کی خاطر بڑے پیمانے پر تحقیقات شروع کی گئی ہے جبکہ حملے کی جگہ نصب سی سی ٹی وی کیمروں کو بھی کھنگالاجارہا ہے تاکہ ملوث بندوق برداروں کی شناخت کرکے اُنہیں گرفتار کیا جاسکے۔

پولیس کے ایک سینئر آفیسر نے بتایا کہ شہر بھر میں سیکورٹی کو الرٹ پر رکھا گیا ہے تاکہ امکانی حملوں کو رونما ہونے سے پہلے ہی ٹالاجاسکے۔ انہوں نے کہاکہ شہری ہلاکتوں میں کون لوگ ملوث ہیں اس کی باریک بینی سے تحقیقات شروع کی گئی ہے۔

انہوں نے کہاکہ کئی مشتبہ افراد کو پوچھ تاچھ کے دائرے بھی لایا گیا ہے لیکن ابھی تک اس حوالے سے کئی پیش رفتہ نہیں ہوئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ ملوث ملی ٹینٹوں کی شناخت کی خاطر ہیومن انٹیلی جنس کو مضبوط کیا گیا ہے۔ سینئر عہدیدار نے بتایا کہ بہت جلد ملوثین کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں