کشمیریوں کو تقسیم کرنے کے حربوں کو سمجھنے اور مذموم عزائم کو ناکام بنانا وقت کی اہم ضروری

نیشنل کانفرنس کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا ہے کہ تقسیمی عناصر کشمیریوں کی آواز کو دبانے کی مذموم سازشوں میں مصروف ہیں،وقت کا تقاضا ہے کہ ہم دشمن کے ان حربوں کو وقت رہتے سمجھیں اور اُن کے عزائم ناکام بنا دیں۔ انہوں نے کہاکہ کشمیر میں ہی آئے روز نئی سیاسی جماعتیں کیوں معرض وجود آرہی ہیں جبکہ جموں میں ایسا رجحان دیکھنے کو نہیں مل رہا ہے۔

صاف ظاہر ہے کہ ایسا صرف اور صرف یہاں کے لوگوں کی آواز کو تقسیم کرکے کمزور کرناہے۔ ڈاکٹر فاروق عبداللہ آج نیشنل کانفرنس پارٹی ہیڈکوارٹر پر پارٹی کی یوتھ ونگ کے ایک اجلاس سے خطاب کررہے تھے۔ اس موقعے پر پارٹی جنرل سکریٹری حاجی علی محمد ساگر، صوبائی صدر ناصر اسلم وانی، ٹریجرر شمی اوبرائے، ایڈوکیٹ شوکت احمدمیر، پیر آفاق احمد، سید توقیر احمد، احسان پردیسی اور صوبائی یوتھ صدر سلمان علی ساگر کے علاوہ یوتھ ونگ صوبہ کشمیر کے نومنتخب شمالی، وسطی اور جنوبی زورن صدور، ضلع صدور اور دیگر عہدیداران بھی موجود تھے۔

تمام شرکاء نے اجلاس میں اپنی اپنی آراء پیش کی اور اپنے اپنے علاقوں کے لوگوں خصوصاً نوجوانوں کے مشکلات، پارٹی سرگرمیوں اور پارٹی پروگراموں کے بارے میں جانکاری دی جبکہ صوبائی یوتھ صدر سلمان علی ساگر نے نومنتخب عہدیداران کا خیر مقدم کیا اور پارٹی لیڈر شپ کیساتھ اُن کا تعارف کرایا۔ ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے اپنا خطاب جاری رکھتے ہوئے کہا کہ نوجوانوں پود کوہی آگے چل کر پارٹی، ملک اور قوم کی باگ ڈور سنبھالنی ہوتی ہے اس لئے ضروری ہے کہ نوجوانوں کو ہر سطح پر بااختیار بنایا جائے۔

انہوں نے پارٹی کے بزرگ اور پیرنٹ ونگ سے وابستہ لیڈران پر زور دیا کہ وہ ہر وقت یوتھ ونگ کی حوصلہ افزائی کریں اور انہیں پارٹی سرگرمیوں اور پارٹی پروگراموں میں ساتھ ساتھ لیکر چلیں۔ انہوں نے ساتھ ہی نوجوانوں پر بھی زور دیا بزرگوں کا احترام کریں اور اُن کے تابع رہ کر کام کریں۔ انہوں نے کہا کہ سیاست ایک کانٹوں کا میدان ہوتا ہے اور اس میں پھونک پھونک کر قدم رکھنا ہوتا ہے، سیاسی میدان میں آخر پر اُسی کی جیت ہوتی ہے جس کا ایمان پختہ ہو اور جو ہمت اور حوصلہ رکھتا ہو۔

ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے پارٹی سے وابستہ نوجوانوں پر زور دیا کہ وہ سماجی میں پھیل رہی بدعات خصوصاً منشیات کے استعمال کا قلع قمع کرنے میں اپنا رول نبھائیں۔ انہوں نے کہا کہ منشیات ہماری نئی نسل کو خاموشی سے کھا رہی ہے، ہمارا فرض بنتا ہے کہ ہم اپنی نئی نسل کو اس گردآب سے باہر نکالیں۔ ادھرنیشنل کانفرنس خواتین ونگ صوبہ کشمیر سے وابستہ شمالی، جنوبی اور وسطی زون کے صدور اور ضلع صدور کا اجلاس خواتین ونگ کی ریاستی صدر ایڈوکیٹ شمیمہ فردوس کی صدارت میں منعقد ہوا۔

جس میں خواتین ونگ کی پارٹی سرگرمیوں اور پارٹی پروگراموں کے علاوہ لوگوں کے مسائل و مشکلات خصوصاً موجودہ سیاسی صورتحال کے بارے میں تبادلہ خیالات کیا گیا۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے شمیمہ فردوس نے کہا کہ بی جے پی کی مرکزی حکومت کو یہاں کے عوام کے احساسات، جذبات اور امنگوں سے کوئی سروکار نہیں ہے بلکہ نئی دلی کو جموں وکشمیر کی زمین چائیے۔نئی دلی زمینی اور اصل مسائل کی طرف توجہ کے بجائے آئے روز عوام کْش فیصلے لے رہی ہے اور ایسا محسوس ہورہا ہے کہ حکومت نے یہاں کے عوام کیخلاف اعلان جنگ کر رکھا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ 5 اگست 2019 کے فیصلوں سے عوام کے دل مجروح ہوگئے ہیں اور مرکزی حکومت نے جموں و کشمیر میں اپنا اعتماد بھی کھویا ہے۔خواتین ونگ کی ریاستی صدر نے کہا کہ نئی دلی کو یہاں کی غیر یقینیت اور بے چینی کے خاتمے کے لئے پہلے جموں و کشمیر کے مسئلہ پر توجہ مرکوز کرنی چائیے اور حالات کو پٹری پر لانے کے لئے عوامی امنگوں کا احترام کرنا چائیے۔ صوبائی صدر انجینئر صبیہ قادری نے اپنے خطاب میں پارٹی عہدیداروں اور کارکنوں پر زور دیا کہ وہ پارٹی کی مضبوطی کیلئے کام کریں اور لوگوں کے مسائل و مشکلات ہر سطح پر اُجاگر کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں