‘سرزمین جموں وکشمیر پر عسکریت پسندی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے تک چین سے نہ بیٹھنے کا عزم ‘

سرزمین جموں وکشمیرپر عسکریت پسندی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے تک چین سے نہ بیٹھنے کا اعلان کرتے جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا کشمیر میں حالیہ شہری ہلاکتوں میں ملوث افراد کوان کی غیر انسانی حرکتوں کی بھاری قیمت چکانی پڑے گی۔ سی این ایس کے مطابق آر مڈ پولیس کمپلیکس زیون، سرینگر میں پولیس یادگاری دن کے موقعہ پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا اگر کوئی جموں و کشمیر میں امن میں خلل ڈالنے کی کوشش کرتا ہے تو ان سے سختی سے نمٹا جائے گا اور ہماری طرف سے مناسب جواب دیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ پولیس اور دیگر سیکورٹی فورسز امن کو برقرار رکھنے کے لیے قابل تحسین کام کر رہی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ جموں و کشمیر اور دیگر فورسز نے جس طرح ملی ٹنسی کا مقابلہ کیا ہے اس کی لفظوں میں سراہنا نہیں کی جا سکتی۔ پولیس اور دوسرے سکیورٹی فورسز امن کی فضا کے قیام کے لئے قابل ستائش کام کر رہے ہیں چاہئے وہ کورونا وبا کے خلاف لڑائی ہو، کورونا گائیڈ لائنز پر عمل درآمد کو یقینی بنانا ہو، امن و قانون کے قیام کو ممکن بنانا ہو یا ملی ٹنسی کے خلاف مقابلہ کرنا ہو، پولیس پہلی صف میں کھڑا ہوتی ہے۔

ایل جی نے کہا کہ جموں وکشمیر کے پولیس صرف یو ٹی میں ہی نہیں بلکہ پورے ملک میں اپنی صلاحیتوں اور ذمہ داریوں کے لیے مقبول ہے۔اگر جے اینڈ پولیس کا دوسرا نام ہے تو وہ ذمہ داری ہے۔ایل جی نے کہا کہ شہریوں اور اقلیتی برادری کے افراد کے بہیمانہ قتل میں ملوث افراد امن کے دشمن ہیں۔سنہا نے کہا،کہ پولیس اور دیگر سیکورٹی فورسز کے ساتھ انتظامیہ کسی کو بھی جموں و کشمیر کے پرانے فرقہ وارانہ تانے بانے کو نقصان پہنچانے کی اجازت نہیں دے گی۔

ایل جی نے جموں و کشمیر کی سول سوسائٹی سے بھی اپیل کی کہ کشمیر میں شہری ہلاکتوں کے خلاف آواز اٹھائیں۔انہوں نے کہا ایک آواز میں شہریوں کے گھناؤنے اور غیر انسانی قتل کی مذمت کرنے سے انتظامیہ، پولیس اور دیگر فورسز کو عسکریت پسندوں کے خلاف اپنی کارروائیوں کو تیز کرنے میں مدد ملے گی۔

منوج سنہا نے اعداد و شمار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ملی ٹنسی کے خلاف لڑائی میں جموں و کشمیر پولیس نے اپنے سولہ سو جوانوں کی قربانی پیش کی ہے۔ ایل جی نے مزید کہا میں آج یہ اعلان کرنا چاہتا ہوں کہ انتظامیہ، پولیس اور دیگر افواج اس وقت تک چین سے نہیں بیٹھیں گی جب تک ہم جموں و کشمیر کی سرزمین سے عسکریت پسندی کا خاتمہ نہیں کر لیتے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں