گزشتہ 12ماہ کے دوران 14جنگجوؤں زندہ گرفتار جبکہ 165جنگجو مختلف جھڑپوں کے دوران ہلاک : وزارت داخلہ

سرینگر:مرکزی وزرات داخلہ نے دعویٰ کیا ہے کہ سال 2018سے جموں کشمیر میں دراندازی اور عسکری واقعات میں کافی کمی آئی ہے جس دوران ماہ دسمبر میں 28جبکہ نومبر کے مہینے میں صرف 15عسکری واقعات جموں کشمیر میں ریکارڈ کئے گئے۔

سی این آئی مانیٹرنگ کے مطابق راجیہ سبھا میں ایک سوال کے تحریری جواب میں مرکزی وریز برائے داخلہ نیتی آند رائے نے کہا کہ جموں کشمیر میں سال 2018سے حالات کافی بہتر ہے اور عسکری کے ساتھ ساتھ دراندازی کے واقعات میں بھی کافی کمی ریکارڈ کی گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ امسال ماہ اکتوبر کے آخر تک 28دراندازی کے واقعات درج ہوئے جبکہ سال 2020میں 51اور سال 2017میں 141جبکہ سال 2018میں 143واقعات درج کئے گئے تھے۔ انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ 12ماہ کے دوران 14جنگجوؤں کو زندہ گرفتار کر لیا گیا جبکہ 165جنگجو مختلف جھڑپوں کے دوران مارے گئے۔ وزیر داخلہ کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق امسال ماہ نومبر کی 21تاریخ تک 200 عسکری واقعات رونما ہوئے تاہم سال 2020میں 244درج ہوئے تھے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اکتوبر 2020سے اکتوبر 2021تک 251عسکری واقعات جموں کشمیر میں رونما ہوئے جن میں سے 37واقعات ماہ اکتو بر میں درج ہوئے، 14ستمبر میں، 36اگست میں، 26جوالائی میں،22جون میں،13مئی میں،12اپریل میں،11مارچ میں، 7فروری اور 8جنوری میں درج ہوئے۔ اسی طرح سے مرکزی وزیر داخلہ کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق اکتوبر 2020سے اکتوبر 2021کے وقت کے دوران سیکورٹی فورسز کے 51اہلکار بھی ہلاک ہو گئے جن میں سے 19پولیس اہلکار جبکہ 32دیگر سیکورٹی فورسز اہلکار شامل ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں