نام نہاد اسمارٹ سٹی پانی پانی ناقص منصوبہ بندی کیلئے ذمہ دار کون؟ساگر

سری نگر، اسمارٹ سٹی کے نام پر غیر منصوبہ بند اور عجلت میں کئے گئے تعمیری کام عوام کیلئے وبال جان بن کر رہ گئے ہیں اور نامنہاد اسمارٹ سٹی کی اصلیت ایک ماہ کے اندر ہی عوام کے سامنے آکر رہ گئی ہے ۔

ان باتوں کا اظہار نیشنل کانفرنس جنرل سکریٹری حاجی علی محمد ساگر نے آج شہر سرینگر سے آئے ہوئے عوامی وفود ، پارٹی عہدیداروں اور کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ سمارٹ سٹی کے نام پر شہر سرینگر میں کئے گئے تعمیراتی کام محض لیپاپوتی ثابت ہوئی ہے اور آج شہر سرینگر میں ایسے مقامات بھی زیر آب آجاتے ہیں جہاں ماضی کبھی ایک انچ پانی بھی جمع نہیں ہوتا تھا۔

انہوں نے کہا کہ لالچوک سمیت شہر سرینگر کو ایک سال سے زائد عرصے تک کھنڈرات میں تبدیل کردیا گیا ہے اور اس بات کے دعوے کئے گئے تھے کہ اب شہر میں کوئی بھی سڑک زیر آب نہیں آئیگی لیکن جیسے جیسے یہ کام مکمل ہورہے ہیں یہ بات بھی صاف ہوتی جارہی ہے یہ سب کچھ محض دکھاوے کیلئے کیا جارہاہے اور تمام منصوبہ بندی قلیل مدتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پولوویو ہائی سٹریٹ کی تعمیر مکمل ہونے کے بعد بہت سارے لوگوں نے اس پروجیکٹ کو اپنے خاطے میں ڈالنے کی کوشش کی لیکن اس پروجیکٹ کی ناکامی کی ذمہ داری قبول کرنے کیلئے کتنے لوگ سامنے آتے ہیں یہ دیکھنا ابھی باقی ہے۔

ساگر نے کہا کہ شہر سرینگر کی 20لاکھ کی آبادی کیلئے نصب49پمپ سٹیشنوں میں سے ایس ایم سی سٹی ڈرینج ڈویژن صرف 4پمپ سٹیشنوں کو اپرگریڈ کیا ہے جبکہ باقی45یا تو کارآمد نہیں یا پھر ناکارہ ہونے کے قریب ہیں۔

انہوں نے کہا کہ افسوسناک امر یہ ہے کہ شہر سرینگر سمارٹ سٹی پروجیکٹ کیلئے مختص رقومات کو ایسے فضول کاموں پر خرچ کیا جارہاہے جن سے عوامی مشکلات میں کمی کے بجائے مزید اضافہ ہوگا۔ شہر سرینگر کو ابھی سڑک، بجلی ، ڈرینج سسٹم اور پانی جیسے مسائل کا سامناہے اور حکومت کی توجہ پہلے لوگوں کو ایسے ہی بنیادی ضروریات بہم پہنچانے کی طرف ہونی چاہئے تھی اور اسمارٹ سٹی پروجیکٹ کے ذریعے ایسے کام آسانی سے انجام دیئے جاسکتے تھے۔ لیکن یہاں محض دکھاوے کیلئے سجاوٹ کے کام کئے گئے اور جو بنیادی کام درکار تھے اُنہیں بالائے طاق رکھا گیا۔

ساگر نے کہا کہ نیشنل کانفرنس نے پہلے کئی بار حکومت کی توجہ اسمارٹ سٹی پروجیکٹ کے نام پر ہورہے کاموں کے قلیل مدتی ہونے کی طرف مبذول کرانے کی کوشش کی لیکن یہاں کے حکمرانوں کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگی۔ انہوں نے کہا کہ شہر سرینگر میں ٹریفک جام کا مسئلہ کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں لیکن یہاں سڑکوں کو کشادہ کرنے کے بجائے مزید تنگ کیا گیا جس سے ٹریفک جام کے مسائل میں اور زیادہ اضافہ ہوگیا ہے ۔

یو این آئی- ارشید بٹ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں