جموں و کشمیر: راجستھان کو بجلی فراہم کرنے پر سیاسی جماعتوں نے انتظامیہ کو ہدف تنقید بنایا

سری نگر، جموں وکشمیر کی سیاسی جماعتوں نے کشتواڑ کے رتلے ہائیڈرو الیکٹرک پروجیکٹ سے راجستھان کو بجلی فراہم کرنے پر انتظامیہ کو ہدف تنقید بنایا ہے۔

بتادیں کہ رتلے ہائیڈرو الیکٹرک پاور کارپویشن لمیٹڈ (آر ایچ پی سی ایل)، نیشنل ہائیڈرو الیکٹرک پاور کارپوریشن (این ایچ پی سی) لمیٹڈ اور جموں وکشمیر اسٹیٹ پاور ڈیولپمنٹ کارپوریشن کی ایک مشترکہ کمپنی ہے۔

وزارت بجلی کے ایک بیان کے مطابق رتلے ہائیڈرو پاور کارپوریشن نے جموں و کشمیر کے کشتواڑ میں اپنے 850 میگا واٹ پاور پلانٹ سے بجلی فراہم کرنے کے لئے راجستھان ارجا وکاس اور آئی ٹی سروسز لمیٹڈ کے ساتھ ایک معاہدہ کیا ہے۔

اس پیش رفت پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے پی ڈی پی صدر اور سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے ہفتے کو سماجی رابطہ گاہ ‘ایکس’ پر ایک پوسٹ میں کہا: ‘ایک ایسے وقت جب جموں وکشمیر شدید بجلی بحران سے دوچار ہے تو ہمارے ہائیڈرو الیکٹرک وسائل کو دوسری ریاستوں کو دیا جا رہا ہے’۔

انہوں نے کہا: ‘یہ لوگوں کو بنیادی سہولیات سے محروم کرنے کا ایک اور فیصلہ ہے جس کا مقصد جموں وکشمیر کے لوگوں کو اجتماعی سزا دینا ہے’۔

نینشل کافرنس کے ترجمان عمران نبی ڈار نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ اس معاہدے سے لوگوں میں غم و غصے کی لہر پائی جارہی ہے کیونکہ اس کے شرائط و ضوابط بظاہر جموں و کشمیر کیلئے نقصان دہ نظر آرہی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاور پرچیز ایگریمنٹ عموماً زیادہ سے زیادہ 20 سال تک رہتے ہیں۔ تاہم اس معاملے میں 40 سال کے لئے پہلے سے طے شدہ قیمت پر دستخط کئے گئے ہیں، اور وہ بھی نامعلوم ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ حکومت کو اس معاہدے پر ایک وائٹ پیپر لانا چاہئے جس میں لوگوں کو اس کے بنیادی مقصد کے بارے میں بتایا جائے اور اس سے جموں و کشمیر کو کیا فوائد حاصل ہوں گے۔

جموں وکشمیر اپنی پارٹی کے سدر سید محمد الطاف بخاری نے اس معاہدے پر حیرانگی ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ایک ایسے وقت جب پورے جموں وکشمیر کو شدید بجلی بحران کا سامنا ہے خاص طور پر دیہی علاقوں میں، رتلے پاور پروجیکٹ کشتواڑ سے راجستھان کو بجلی لیز پر دینے کی خبریں پریشان کن ہیں۔

انہوں نے ‘ایکس’ پر ایک پوسٹ میں مزید کہا: ‘جموں وکشمیر انتظامیہ نے بار بار یہ دعویٰ کرتی ہے کہ وہ دوسری ریاستوں سے بجلی خرید رہی ہے تاکہ یونین ٹریٹری میں بجلی کی مانگ کو پورا کیا جاسکے’۔

ان کا کہنا: ‘تاہم اس بیچ دوسری ریاستوں کو اپنی بجلی سپلائی لیز پر دینا سمجھ سے بالاتر ہے’۔

انہوں نے جموں وکشمیر انتطامیہ سے اس ضمن میں حقائق کو واضح کرنے کی اپیل کی۔

یو این آئی ایم افضل

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں