دفعہ370کے خاتمے کا سب زیادہ خمیازہ آج جموں کے عوام کو بھگتنا پڑ رہاہے: ڈاکٹر فاروق عبداللہ

جموں، جموں وکشمیر نیشنل کانفرنس کے صدر فاروق عبداللہ نے پیر کے روز کہا کہ سال 1990کے بعد پُرآشوب دور میں جموں وکشمیرکا تمام ڈھانچہ تہس نہس ہوگیا تھا ، جمہوریت اور ورک کلچر نام کی کوئی چیز نہیں تھی، بیشتر پُل، سرکاری عمارتیں، سکول اور دیگر تعلیمی ادارے خاکستر ہوگئے تھے اور لوگ خوف و ہراس کے سائے تلے زندگی گزار رہے تھے

انہوں نے کہا 1996میں کوئی الیکشن لڑنے کیلئے تیار نہیں تھا لیکن ہم نے اُس وقت آگ میں کود کر جموں وکشمیر کے عوام کو اس پُرآشوب دور سے نکالنے کی ٹھان لی اور اس کیلئے ہمارے ہزاروں کارکنوں ، عہدیدارون اور لیڈران نے اپنی جان کی قربانیاں پیش کیں۔

ان باتوں کا اظہار موصوف نے نگروٹہ میں حلقہ انتخاب بورن کے یک روزہ عظیم الشان کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہاکہ نیشنل کانفرنس نے 1996میں ایک ایسے وقت میں جموں وکشمیر کی تعمیر نو کا کام شروع کیا ، جب یہاں نہ کوئی پُل بچا تھا نہ کوئی سرکاری ڈھانچہ، نہ کوئی سڑک قابل آمد و رفت تھی اور نہ ہی کوئی ادارہ قابل کار تھا۔

ہم نے نہ صرف آہستہ آہستہ ماحول ٹھیک کیا بلکہ ہزاروں کی تعداد میں سکول، کالج، پُل اور سرکیں تعمیر کیں اور 6سالہ دور میںڈیڑھ لاکھ سے زیادہ سرکاری ملازمتیں فراہم کیں۔ دور دراز لوگوں کیلئے رہبر تعلیم ،رہبر زراعت اور موقعے پر ہی ڈی جی بھرتی جیسی سکیمیں متعارف کرائیں اور پُرآشوب ریاست کا نظام پھر سے پٹری پر لایا ۔

ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہاکہ آج جو لوگ یہاں امن و امان اور تعمیروترقی کے دعوے کررہے ہیں ، وہ محض زبانی جمع خرچ سے لوگوں کو گمراہ کرنے کی کوششیں کررہے ہیں۔ نیشنل کانفرنس نے جموں وکشمیر کی ترقی اور عوام کیلئے جتنا فلاحی کام کیا ہے ، اُس کا کوئی ثانی نہیںہوسکتا۔

دفعہ 370کے متعلق گمراہ کُن پروپیگنڈا پھیلانے والوں کو ہدف تنقید بناتے ہوئے کہا کہ اسی دفعہ کی بدولت یہاں کے عوام کو زمینوں پر مالکانہ حقوق ملے اور مفت تعلیم جیسے مراعات حاصل ہوئے۔ دفعہ370مہاراجہ ہری سنگھ کی میراث تھی ، جسے غیر جمہوری، غیر آئینی اور یکطرفہ طور پر چھین لیاگیا۔ دفعہ370کے خاتمے کا سب زیادہ خمیازہ آج جموں کے عوام کو بھگتنا پڑ رہاہے۔

یو این آئی – ارشید بٹ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں