ای سی پی نے عمران کے وارنٹ گرفتاری کو فی الحال موخر کیا

اسلام آباد، الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے توہین عدالت کیس میں سابق وزیر اعظم اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان کے وارنٹ گرفتاری کو عارضی طور پر معطل کرتے ہوئے انہیں الزام کا سامنا کرنے کے لیے 2 اگست کو کمیشن کے سامنے پیش ہونے کے لئے کہا ہے۔ کمیشن نے ہفتہ کو یہ اطلاع دی۔

25 جولائی کو اس معاملے کی سماعت کے تحریری حکم نامے کی کاپی ڈان ڈاٹ کام کے پاس موجود ہے۔ ای سی پی نے کہا کہ وہ سابق وزیراعظم کے پہلے جاری کیے گئے وارنٹ گرفتاری کو معطل کر رہا ہے۔ کمیشن نے کہا کہ یہ فیصلہ مسٹر خان کے اس معاملے کے سلسلے میں انتخابی نگران کے سامنے پیش ہونے کی روشنی میں کیا گیا ہے۔

مسٹر خان کے خلاف پہلا مقدمہ گزشتہ سال اگست میں شروع ہوا تھا جس کے بعد وہ 25 جولائی کو الیکشن واچ ڈاگ کے سامنے پیش ہوئے تھے۔ ان کی پیشی سے ایک دن قبل، ای سی پی نے اسلام آباد پولیس سے مسٹر خان کو گرفتار کرنے اور انتخابی نگران کے سامنے پیش کرنے کے لئے کہا تھا۔

ای سی پی نے گزشتہ سال پی ٹی آئی کے سربراہ، پارٹی رہنما اسد عمر اور سابق وزیر اطلاعات چوہدری کے خلاف چیف الیکشن کمشنر اور انتخابی مبصر کے خلاف مبینہ طور پر ‘غیر مہذب’ زبان استعمال کرنے پر توہین عدالت کی کارروائی شروع کی تھی۔

ای سی پی کے سامنے پیش ہونے کے بجائے، تینوں لیڈروں نے کمیشن کے نوٹس اور توہین عدالت کی کارروائی کو مختلف ہائی کورٹس میں اس بنیاد پر چیلنج کیا کہ الیکشن ایکٹ 2017 کے سیکشن 10 کے تحت، جو توہین کی سزا دینے کے کمیشن کے اختیارات سے متعلق قانونی التزام ہے۔

جنوری میں سپریم کورٹ نے ای سی پی کو مسٹر خان، چودھری اور عمر کے خلاف کارروائی جاری رکھنے کی اجازت دی تھی اور 21 جون کو ای سی پی نے تینوں کے خلاف الزامات طے کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ اس کے بعد 11 جولائی کو سمن بھیجے جانے کے باوجود تینوں کمیشن کے سامنے پیش نہیں ہوئے۔ اس کے بعد ای سی پی نے مسٹر چودھری اور مسٹر خان کے خلاف گرفتاری کے وارنٹ جاری کئے۔ تاہم کمیشن نے عمر کے وکیل کی سماعت سے استثنیٰ کی درخواست منظور کرلی۔

کمیشن نے الزامات عائد کرنے کے لیے کیس کی سماعت 2 اگست تک ملتوی کر دی ہے۔

یواین آئی۔ م ع۔ 1844

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں