عمران نے فرد جرم کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کیا

اسلام آباد، اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) کے جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے بدھ کو اڈیالہ جیل میں سائفر کیس کی بند کمرہ میں کارروائی کو چیلنج کرنے والی سابق وزیر اعظم اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان کی درخواست پر سماعت کریں گے۔

اپنی درخواست میں مسٹر خان نے اپنی عرضی میں اپنے نئے مقدمے اور اس کے بعد ہونے والی پیش رفت کو بھی چیلنج کیا، جس میں الزامات کا تعین اور میڈیا پر پابندی کے حکم کو بھی شامل کیا گیا۔

دریں اثنا آئی ایچ سی نے شفافیت اور کھلے پن کے فقدان کی وجہ سے خصوصی عدالت (آفیشل سیکرٹس ایکٹ) کی کارروائی کے پہلے دور کو منسوخ کرنے کی وجوہات بتاتے ہوئے ایک تفصیلی فیصلہ جاری کیا۔ عدالت کھلی عدالتی کارروائی کو عدالتی نظام کی آزادی سے جوڑتی ہے۔

بنچ نے کہا کہ ٹرائل کورٹ کے جج کی درخواست پر اسلام آباد انتظامیہ نے جیل میں کارروائی کا عمل شروع کیا کیونکہ اس نے وزارت داخلہ کو پولیس رپورٹ سے آگاہ کیا تھا جس میں امن و امان سے متعلق بعض خدشات کا اظہار کیا گیا تھا۔ سماعت جیل کے کمرہ عدالت میں ہونی تھی۔ اس اطلاع کی بنیاد پر وزارت قانون نے مسٹر خان کے خلاف جیل میں مقدمہ چلانے کا نوٹیفکیشن جاری کیا۔

تفصیلی حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ 8 نومبر 2023 کو چیف کمشنر نے جیل میں کارروائی کا عمل دوبارہ شروع کیا۔ وزارت داخلہ نے خط وزارت قانون کو بھجوا دیا جس کی منظوری کے لیے سمری وفاقی کابینہ کو بھجوائی گئی۔

اس میں کہا گیا کہ جیل میں ٹرائل کا نوٹیفکیشن جاری ہونے سے پہلے خصوصی عدالت کے جج نے جیل میں کارروائی یا ٹرائل کے لیے کوئی عدالتی حکم جاری نہیں کیا تھا جس کے خلاف نظرثانی کو ترجیح دی جا سکے۔ اس میں کہا گیا کہ جج نے بند کمرہ میں کارروائی کی اور اسے یہ سمجھنا چاہیے تھا کہ کھلی سماعت منصفانہ مقدمے کی کم از کم ضرورت ہے اور جس طرح سے اس نے کارروائی کی وہ منصفانہ مقدمے کے اصولوں کے لیے تباہ کن تھی۔

ایک متعلقہ پیش رفت میں قومی احتساب بیورو (نیب) نے منگل کو احتساب عدالت میں پی ٹی آئی کے بانی مسٹر خان اور ان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کے خلاف سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان سے ملنے والے زیورات کے سیٹ کو کم قیمت کے باوجود اپنے پاس رکھنے کا ایک نیا معاملہ دائر کیا۔

‘ڈان’ اخبار کے پاس دستیاب ریفرنس کی ایک کاپی کے مطابق انسداد بدعنوانی کے نگراں ادارے نے الزام لگایا ہے کہ بطور وزیر اعظم عمران خان اور ان کی اہلیہ کو مختلف سربراہان مملکت اور غیر ملکی معززین سے مجموعی طور پر 108 تحائف موصول ہوئے تھے۔ ان تحائف میں سے انہوں نے مبینہ طور پر 58 تحائف اپنے پاس رکھے تھے جن کی قیمت 14.2 کروڑ روپے سے زیادہ تھی۔

اس میں کہا گیا ہے کہ این اے بی چیئرمین نے یکم اگست 2022 کو اس موضوع پر تحقیقات کا اختیار ڈائریکٹر جنرل نیب راولپنڈی کو سونپ دیا۔ ڈائریکٹر جنرل نے 5 اگست 2022 کو تحقیقات کی منظوری دی تھی۔

توشہ خانہ کے طریقہ کار کے مطابق سرکاری/عوامی عہدیداروں کو موصول ہونے والے تمام تحائف، ان کی قیمت سے قطع نظر، اطلاع دی جانی چاہیے اور فوری طور پر کابینہ ڈویژن کے توشہ خانہ میں جمع کرائے جانے چاہئیں۔

یو این آئی۔ م ع۔ 1525

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں