ایران جنگ بندی کے کسی بھی سیاسی حل کی حمایت کرے گا: حسین

تہران، ایران کے وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان نے غزہ میں جاری سنگین انسانی بحران کو حل کرنے والے کسی بھی سیاسی حل کی تہران کی حمایت کا اظہار کیا ہے۔

ایرانی وزارت خارجہ کی ویب سائٹ پرہفتہ کو شائع ہونے والے ایک بیان کے مطابق، ایرانی وزیر خارجہ نے یہ بات جمعہ کو نیویارک میں اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹیرس کے ساتھ ملاقات میں کہی۔ انہوں نے مشرق وسطیٰ بالخصوص غزہ کی پٹی کی تازہ ترین پیش رفت پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

مسٹر حسین نے کہا کہ ایران کسی بھی سیاسی حل کی حمایت کرے گا جس میں غزہ میں قتل عام کا فوری خاتمہ، ساحلی علاقے میں انسانی امداد کی مسلسل ترسیل اور غزہ کے لوگوں کی جبری نقل مکانی کو روکنا شامل ہے۔

انہوں نے عالمی برادری اور اقوام متحدہ کو فلسطینیوں کی حمایت میں اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے کے لیے فوری اور فیصلہ کن اقدام کرنے کی ضرورت پر بھی بات کی۔
حماس نے 7 اکتوبر کو اسرائیل پر ایک حملہ کیا جس میں ہزاروں راکٹ فائر کیے اور اسرائیلی علاقے میں دراندازی کی، جس کے جواب میں اسرائیل نے بڑے پیمانے پر فضائی حملے، زمینی کارروائیاں، اور تعزیری اقدامات شروع کیے، جن میں پانی، بجلی اور ایندھن کی سپلائی کے ساتھ انکلیو کا محاصرہ بھی شامل تھا۔

دونوں اطراف کے سرکاری اعداد و شمار کے مطابق، اسرائیل اور حماس تنازعہ 22 ویں دن میں داخل ہو گیا ہے، جس میں غزہ میں 7700 سے زیادہ فلسطینی اور اسرائیل میں کم از کم 1400 افراد مارے گئے ہیں۔

یواین آئی۔الف الف

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں