اسرائیل غزہ جنگ سے عرب خطہ کے کھائی میں جانے کا خوف!

واشنگٹن، فلسطینی امن مشیر ہبہ حسینی نے کہا ہے کہ عرب خطہ غیر معمولی پیمانے کے سیاسی بحران کی زد میں ہے اور اندیشہ ہے کہ اسرائیل غزہ تنازع خطے کو مزید مسائل میں ڈال سکتا ہے۔

مسٹر حسینی نے یہ اطلاع اسپوٹنک کو دی۔
انہوں نے کہا کہ ”عرب دنیا ایک ایسے سیاسی بحران کا شکار ہے جس کی مثال نہیں ملتی، 1948 کے نکبہ کے بعد سے نہیں دیکھا گیا۔ عرب حکومتوں نے ابھی تک اس معاملے میں کوئی پوزیشن نہیں لی ہے۔ تاہم، ایک ہم آہنگ لہجہ اور پیغام ہے کہ یہ جنگ ہمیں ایک گہرے بلیک ہول میں لے جا سکتی ہے۔ تعلقات بہت کشیدہ ہیں۔‘‘

مسٹر حسینی نے کہا کہ غزہ کے تنازع کے حل کے لیے فوری اقدامات کیے جائیں جب تک کہ کوئی طویل المدتی سیاسی حل نہیں نکل جاتا، جس میں یرغمالیوں کی رہائی کے بدلے جنگ بندی، فلسطینیوں کے لیے انسانی حالات میں بہتری اور عمارتوں، گھروں، مقامات کی بحالی، عبادت گاہوں اور خاص طور پر اس میں غزہ میں ہسپتالوں اور طبی دیکھ بھال کی سہولیات کو ختم کرنا شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسرائیل کو مغربی کنارے میں اسرائیلی اسپیشل فورسز کی دراندازی، مغربی کنارے میں آباد کاروں کے تشدد اور فلسطینیوں کے خلاف نفسیاتی جنگ کو روکنا چاہیے۔

واضح رہے کہ 7 اکتوبر کو حماس نے اچانک اسرائیل پر زبردست حملہ کیا تھا۔ اس کے فوراً بعد اسرائیل نے جوابی حملے کیے اور غزہ کی پٹی کی مکمل ناکہ بندی کا حکم دیا۔

گزشتہ ہفتے اسرائیل نے غزہ پر اپنی زمینی کارروائی کا آغاز کیا تھا، جسے حکومت نے حماس کے خلاف کارروائی کا ‘دوسرا مرحلہ’ قرار دیا تھا۔ اسرائیل اور حماس کے درمیان جاری لڑائی میں اب تک 10 ہزار سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ فلسطینی وزارت صحت نے منگل کے روز بتایا کہ غزہ کی پٹی پر اسرائیلی حملوں میں ہلاکتوں کی تعداد ساڑھے آٹھ ہزار سے تجاوز کر گئی ہے اور اکیس ہزار سے زائد افراد زخمی ہوئے ہیں۔ اسرائیل میں ہلاکتوں کی تعداد 1500 سے تجاوز کر گئی ہے۔

یواین آئی۔ اسپوٹنک۔ ظ ا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں