حالیہ 3 ماہ میں غزہ موت اور لاچارگی کی جگہ بن چکا ہے، اقوام متحدہ

اقوام متحدہ، اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ 7 اکتوبر کو شروع ہونے والے حملوں کے بعد گزرنے والے 3 ماہ میں غزہ موت اور لاچارگی کی جگہ بن چکا ہے ۔

اقوام متحدہ کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل برائے انسانی امورو ہنگامی امداد کے کوآرڈینیٹر مارٹن گریفتھس نے اپنے تحریری بیان میں غزہ میں قتل عام پر اپنے خیالات کا اظہار کیا۔

انہوں نے کہا کہ”خوفناک حملوں کے آغاز 7 اکتوبر سے ابتک کے تین ماہ کے دورانیہ میں غزہ ہلاکتوں اور لاچارگی کی تصویر بن چکا ہے۔”

غزہ میں مواصلاتی مسائل بدستور جاری ہونے ، سڑکوں کو نقصان پہنچنے اور قافلوں کو نشانہ بنائے جانے کی یاد دہانی کراتے ہوئے گریفتھس نے اس بات پر بھی زور دیا کہ انسانوں کی بقا کے لیے تقریباً کوئی تجارتی سپلائی نہیں ہے۔

یہ بیان کرتے ہوئے کہ غزہ ناقابل رہائش بن چکا ہے، جنگ کو فوری طور پر ختم ہونا چاہیے، “90 دنوں سے جاری جہنم اور انسانیت کے بنیادی حقوق پر حملوں” کو فراموش نہیں کیا جائے گا، گریفتھس نے کہا، “اس جنگ کو کبھی شروع نہیں ہونا چاہیے تھا اوربہت پہلے ہی ختم ہوجانا چاہیے تھا۔”

یو این آئی۔ ع ا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں