چین نے قانونی ڈھانچے اور انسداد دہشت گردی کے اقدامات پر جاری کیا وائٹ پیپر

بیجنگ، چین نے آج دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے قانونی ڈھانچہ اور اقدامات کے عنوان سے ایک وائٹ پیپر جاری کیا۔

اسٹیٹ کونسل انفارمیشن سینٹر کی جانب سے جاری کردہ وائٹ پیپر میں دیباچہ اور خاتمہ کے علاوہ، پانچ حصے ہیں، جن میں ’دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے ایک بہتر قانونی ڈھانچہ‘، ’دہشت گردانہ سرگرمیوں کے تعین اور سزا کے لیے واضح التزام‘، ’دہشت گردی کے خلاف لڑنے میں طاقت کا معیاری استعمال‘، ’انسداد دہشت گردی کے طریقوں میں اتھارٹی‘ اور ’عوامی تحفظ اور قومی سلامتی کا مؤثر تحفظ‘ شامل ہیں۔

وائٹ پیپر میں کہا گیا ہے کہ دہشت گردی بین الاقوامی امن، انسانیت اور سلامتی کے لیے ایک مشترکہ دشمن اور سنگین خطرہ ہے اور ساتھ ہی یہ سبھی ممالک اور پوری انسانیت کے لیے ایک چیلنج ہے۔ اس میں کہا گیا ’’عالمی برادری کے تمام اراکین اس سے لڑنے کی ذمہ داری کا اشتراک کرتے ہیں۔‘‘

دستاویز میں کہا گیا کہ دہشت گردی کا شکار ہونے کے ناطے، چین کو طویل عرصے سے اپنے حقیقی خطرے کا سامنا ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ چین نے ہمیشہ قانون پر مبنی انسداد دہشت گردی کی کوششوں کو بہت اہمیت دی ہے اور بین الاقوامی کنونشنوں اور معاہدوں کو انجام دینے یا اس میں شامل ہو کر اور فوجداری قوانین میں ترمیم اور اصلاحات کا تجربہ حاصل کیا ہے۔

دستاویز میں کہا گیا کہ گزشتہ برسوں کے دوران چین نے قانون پر مبنی انسداد دہشت گردی کا راستہ تلاش کیا ہے جو ایک ٹھوس قانونی ڈھانچہ قائم کرکے، سخت، غیر جانبدارانہ، عمل پر مبنی قانون کے نفاذ کو فروغ دے کر اور انصاف کی غیر جانبدار انتظامیہ اور موثر انسانی حقوق کو یقینی بنا کر سیکورٹی اس کے حقائق کے مطابق ہے۔

اس میں کہا گیا ’’چین نے قومی اور عوامی سلامتی کا تحفظ کیا ہے، لوگوں کے جان و مال کا تحفظ کیا ہے، اور عالمی اور علاقائی سلامتی اور استحکام میں اپنا رول ادا کیا ہے۔‘‘

وائٹ پیپر میں انسداد دہشت گردی کے نقطہ نظر جو انسانیت کی مشترکہ اقدار کی وکالت کرتا ہے، اقوام متحدہ کے معیارات اور اصولوں کی تعمیل کرتا ہے اور اپنے قومی حالات اور قانونی اداروں کے ساتھ مطابقت رکھتا ہے، یہ سبھی قانون کی حکمرانی کے تحت دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے عالمی کوششوں کا حصہ ہیں۔

دستاویز میں کہا گیا ہے کہ مشترکہ مستقبل کے عالمی برادری کے وژن کو برقرار رکھتے ہوئے چین عالمی حکمرانی کے حصے کے طور پر انسداد دہشت گردی کے معاملے کو آگے بڑھانے کے لیے دیگر ممالک کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے تیار ہے۔

یو این آئی۔ این یو۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں